Laaltain

سپاہی تنویر حسین کی ڈائری

۱۹۷۱ء تین دسمبرسے سترہ دسمبرکی رات تک کی یادداشتوں میں سپاہی کےشب وروزکےمعمول، جنگ کےسچ، جھوٹ، افواہیں، اپنی بقاء کیلیئے بے رحمی سے لڑنے والے کُچھ سپاہی، کُچھ مُکتی جوت، کُچھ قاتل، جنگ سے یکسر لا تعلق کُچھ لوگ، کُچھ چہروں کی مُسکراہٹیں اور کُچھ آنکھوں کے آنسُو؛ سابق مشرقی پاکستان سے وابستہ کئی احساسات […]

کیا نظری طبیعیات کا اختتام قریب ہے؟ میں ان صفحات میں اس امکان پر گفتگو کرنا چاہتا ہوں کہ نظری طبیعیات کے مقاصد مستقبل قریب میں ہم حاصل کر چکے ہوں گے، عین ممکن ہے اس صدی کے اختتام تک۔ اس سے میری مراد یہ ہے کہ ہم شاید اشیاء کے باہمی تعامل کا ایک […]