گیارہ مئی 2016ء کو خیبر پختونخواہ میں پاکستان تحریک انصاف کے تین سال مکمل ہوئے جبکہ تیس مئی 2016 کو صوبے میں بلدیاتی انتخابات کو ایک سال کا عرصہ بیت گیا۔ پاکستان تحریک انصاف کی صوبائی حکومت بلدیاتی نظام کو اپنی بڑی کامیابی قرار دیتی ہے لیکن بلدیاتی انتخابات کو ایک برس مکمل ہو جانے کے بعد یہ دیکھنا ضروری ہے کہ بلدیاتی حکومتوں کی کارکردگی کیسی رہی۔ تیس مئی 2015 کو خیبرپختونخوا کی حکومت نے صوبے میں مقامی حکومتوں کے قیام کے لئے انتخابات منعقد کیے۔ انتخابات کو مکمل ہوئے ایک برس گزر جانے کے باوجود ان اداروں کی کارکردگی مایوس کن ہے، کیونکہ ابھی تک نہ تو بلدیاتی نمائندوں کو اختیارات منتقل کئے گئے ہیں اور نہ ہی ترقیاتی فنڈز۔

پاکستان تحریک انصاف کی صوبائی حکومت بلدیاتی نظام کو اپنی بڑی کامیابی قرار دیتی ہے لیکن بلدیاتی انتخابات کو ایک برس مکمل ہو جانے کے بعد یہ دیکھنا ضروری ہے کہ بلدیاتی حکومتوں کی کارکردگی کیسی رہی۔
مئی 2013ء کے پارلیمانی انتخابات سے قبل چیرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان اپنی تقریروں، نجی گفتگو اور ذرائع ابلاغ کو دئیے جانے والے انٹرویوز میں متعدد بار اس بات کا اعادہ کر چکے تھے کہ جمہوریت کی مضبوطی اور استحکام کا انحصار بلدیاتی نظام پر ہے ان کا دعویٰ تھا کہ اگر انہیں حکومت ملی تو نوے دن کے اندر بلدیاتی انتخابات منعقد کرکے ترقیاتی فنڈ اوراختیارات منتخب نمائندوں کے حوالے کریں گے جبکہ اراکین اسمبلی کا کام قانون سازی ہو گا۔ خیبرپختونخوا میں صوبائی حکومت کے قیام کے بعد انتخابات سے قبل کے دعوے اور وعدے ایک ایک کر کے بھلا دئیے گئے جن میں مقامی حکومتوں کا قیام بھی شامل تھا۔

ذرائع ابلاغ اور عدلیہ کے زبردست دباؤ کے بعد بالآخر دوسال بعد تیس مئی دوہزارپندرہ کو صوبہ بھر میں لوکل گورنمنٹ آرڈیننس 2013 کے تحت مقامی حکومتوں کے انتخابات منعقد کرائے گئے۔ تحریک انصاف کی ناقص کارکردگی کے باعث صرف دوسال بعد ہی عوام نے اس حکومت پر عدم اعتماد کا اظہار کیا اور صوبے کے بیشتر اضلاع میں پاکستان تحریک انصاف کے ووٹس میں کمی آئی ہے۔ اس کے بعد سے صوبائی حکومت بلدیاتی اداروں کو طاعون زدہ سمجھ کر انہیں ہاتھ لگانے سے گریز کر رہی ہے۔ انتخابات کے 93روز بعد تیس اگست دوہزار پندرہ کو منتخب بلدیاتی نمائندوں سے حلف لے کر رسمی کاروائی پوری کی گئی۔ حلف لیے جانے کے کئی ہفتوں بعد ضلعی اور تحصیل حکومتوں کا قیام عمل میں آیا۔ آئے روز حکومتی ذرائع سے بلدیاتی اداروں کو فعال بنانے، اختیارات کی منتقلی اور ترقیاتی فنڈز کے اجراء کے بیانات ذرائع ابلاغ کی زینت بنتے رہے لیکن عملی کام نہ ہو سکا۔ دن ہفتوں، ہفتے مہینوں اور مہینے اب سال میں بدل چکے ہیں لیکن ابھی تک بلدیاتی اداروں کو فعال نہیں بنایا جا سکا۔

یہ پہلا موقع نہیں کہ صوبائی بجٹ کا بڑاحصہ لیپس ہوگیا ہو بلکہ خیبر پختونخوا کی حکومت نے اس سال بجٹ لیپس کرنے کی ہیٹ ٹریک مکمل کی ہے۔
گزشتہ برس بلدیاتی انتخابات کے صرف چند روز بعد صوبائی حکومت نے مالی سال 2015-16ء کا بجٹ پیش کیا جس میں بلدیات کے لئے 45 ارب روپے مختص کی گئی تھی۔ مالی سال کے اختتام کے پر پتہ چلا کہ ترقیاتی منصوبوں کے لئے مختص رقم کا بڑاحصہ یعنی 11 ارب روپے استعمال نہیں کیے جا سکے۔ بلدیات ودیہی ترقی کے لئے جاری کردہ 44ارب روپوں میں سے ایک روپیہ بھی خرچ نہیں کیا جا سکا۔ یعنی گزشتہ ایک سال سے منتخب بلدیاتی نمائندے محض طفل تسلیوں گزارا کر رہے ہیں جبکہ عوام نے ان نمائندوں کا جینا دوبھر کر دیا ہے۔ یہ پہلا موقع نہیں کہ صوبائی بجٹ کا بڑاحصہ لیپس ہوگیا ہو بلکہ خیبر پختونخوا کی حکومت نے اس سال بجٹ لیپس کرنے کی ہیٹ ٹریک مکمل کی ہے۔ اس سے قبل مالی سال 2013-14ء کے اختتام پر 94 ارب روپے مالی سال 2014-15ء میں ترقیاتی منصوبوں کے لئے مختص رقم کا ساٹھ فیصد یعنی 97ارب روپے استعمال نہ ہونے کی وجہ دوبارہ خزانے میں چلے گئے تھے اور مالی سال 2015-16ء میں بھی ایک سو دس ارب روپے سے زیادہ رقم لیپس ہو گئی ہے۔

نامور صحافی محمد شریف شکیب ایک ماہ قبل اس حوالے سے لکھا تھا "رواں مالی سال کے گیارہ مہینوں میں سالانہ ترقیاتی فنڈز کا صرف ساٹھ فیصد ہی خرچ ہو سکا جبکہ مالی سال کے اختتام پر چالیس فیصد بجٹ لیپس ہونے کا خدشہ ہے۔ سرکاری دستاویزات کے مطابق رواں مالی سال کے بجٹ میں سالانہ ترقیاتی پروگرام کے لئے مختص 113 ارب روپے میں سے صرف 67کروڑ70لاکھ روپے ہی خرچ ہو سکے ہیں جبکہ مالی سال ختم ہونے میں چند روز ہی باقی ہیں۔ محکمہ صحت، بلدیات و دیہی ترقی، سماجی بہبود اور جنگلات سمیت گیارہ محکمے اپنے سالانہ ترقیاتی فنڈ میں سے پچاس فیصد بھی اب تک خرچ نہیں کر سکے۔ بات یہیں ختم نہیں ہوتی سرکاری اعدادوشمار کے مطابق محکمہ خوراک، معدنیات، ماحولیات اور توانائی سمیت نو محکمے اپنے بجٹ کا ایک چوتھائی بھی خرچ نہیں کر سکے۔ ان محکموں کا 75فیصد فنڈز لیپس ہونے کا اندیشہ ہے صوبائی حکومت کے لئے لمحہ فکریہ ہے کہ جن شعبوں کو انہوں نے اپنی ترجیحات میں شامل کیاہے ان کے لئے مختص فنڈ زبھی مالی سال ختم ہونے کے باوجود استعمال نہیں کیے جا سکے جن میں محکمہ صحت، بلدیات ودیہی ترقی اور جنگلات قابل ذکر ہیں۔

ایک مختاط اندازے کے مطابق گزشتہ تین سالوں کے دوران تقریباً تین سو ارب یعنی تین کھرب روپے استعمال نہ ہو سکے جو کہ ایک غریب صوبے کے لئے بہت بڑی رقم ہے۔
بلدیاتی اداروں کے قیام کے باوجود منتخب نمائندے ہاتھ پر ہاتھ دھرے بیٹھے ہیں اور کوئی ترقیاتی کام شروع نہیں کرسکے حالانکہ صوبہ بھر میں چالیس ہزار سے زیادہ منتخب بلدیاتی نمائندوں کے لئے 44 ارب روپے کا اعلان کیا گیا تھا اس رقم میں بعد ازاں کٹوتی کی گئی اور باقی ماندہ رقم کابھی نصف حصہ بروئے کار نہیں لا سکا۔ اسی طرح صوبائی حکومت نے ’بلین ٹری سونامی‘ مہم کے تحت صوبے میں ایک ارب پودے لگانے کا منصوبہ شروع کیاہے اس منصوبے کے لئے کافی وسائل درکارہیں لیکن مالی سال کے دوران محکمہ جنگلات وماحولیات کے لئے مختص فنڈ کا پچیس سے پچاس فیصد خرچ نہ ہونا کئی سوالات کو جنم دیتا ہے”۔

سن 2013ء کے انتخابات کے بعد خیبر پختونخوا کو جس ماڈل صوبے کی شکل دینے کی بات ہوئی تھی وہ معاملہ انتظامی نااہلی کی نظر ہو چکا ہے البتہ خیبرپختونخوا بجٹ لیپس کے حوالے سے مثالی صوبے کی حیثیت اختیار کر چکا ہے۔ ایک مختاط اندازے کے مطابق گزشتہ تین سالوں کے دوران تقریباً تین سو ارب یعنی تین کھرب روپے استعمال نہ ہو سکے جو کہ ایک غریب صوبے کے لئے بہت بڑی رقم ہے۔ مبصرین کے مطابق صوبائی حکومت نے ان تین سالوں میں ایک بھی بڑا منصوبہ شروع نہیں کیا اورنہ ہی مستقبل میں ایساکوئی امکان ہے۔ مالی سال 2013-14ء میں لواری ٹنل کے لئے تین ارب روپے مختص کئے گئے تھے مالی سال کے خاتمے پر پتہ چلا کہ ان میں سے ایک روپیہ بھی جاری نہیں کیا گیا۔
پورے ملک کی طرح خیبرپختونخوا میں بجلی کا بحران روز بروز شدت اختیار کرتا جا رہا ہے لیکن ابھی تک توانائی کے شعبے میں کوئی کام نہیں ہوا حالانکہ صرف چترال میں ہی 14 ہزار میگاواٹ بجلی پیداکرنے کی گنجائش موجود ہے۔ اس سلسلے میں کئی مقامات پر سینکڑوں اور ہزاروں میگاواٹ بجلی گھروں کی ابتدائی فیزیبلٹی رپورٹ بھی تیار کی گئی ہے لیکن اب تک ایک پربھی عملی کام شروع نہیں ہوا۔ اگر چہ صوبائی حکومت نے این جی اوز کی مدد سے چترال اور ہزارہ ڈویژن میں چھوٹے پن بجلی گھروں کی تعمیر کے لئے اربوں روپے جاری کردئیے ہیں لیکن ان میں بھی کام کی رفتار انتہائی سست روی کا شکار ہے۔ ضلع چترال کا بالائی حصہ یعنی سب ڈویژن مستوج گزشتہ گیارہ ماہ سے تاریکی میں ڈوبا ہوا ہے۔ پچھلے سال مون سون کے موسم میں علاقے کو روشنی سے منور کرنے والا چاراعشاریہ دومیگاواٹ کے واحد بجلی گھر کو سیلاب کی وجہ سے جزوی نقصان پہنچا تھا لیکن تاحال اس کی دوبارہ بحالی سے متعلق کوئی لائحہ عمل اختیار نہیں کیاگیا ہے۔

مقامی حکومتوں کے انتخابات کو ایک سال کا عرصہ بیت چکا ہے لیکن تاحال بلدیاتی اداروں کے ذریعے ایک روپیہ بھی خرچ نہیں کیا گیا
ابتدائی دو برس میں یہ کہہ کر ترقیاتی کام شروع نہیں کئے گئے کہ چونکہ بلدیاتی نظام کی غیر موجودگی میں کرپشن کے امکانات موجود ہیں لہٰذا بلدیاتی انتخابات کے بعد منتخب نمائندوں کے ذریعے ترقیاتی کام شروع کیا جائے گا لیکن مقامی حکومتوں کے انتخابات کو ایک سال کا عرصہ بیت چکا ہے لیکن تاحال بلدیاتی اداروں کے ذریعے ایک روپیہ بھی خرچ نہیں کیا گیا یوں ترقی کا پہیہ 2013ء کے بعد رک چکا ہے۔

ان حقائق کے پیش نظر یہ کہنا بے جا نہ ہوگا کہ پاکستان تحریک انصاف پنجاب کو فتح کرنے کی کوشش میں اپنے زیر انتظام صوبے کو پتھر کے دورمیں دکھیل رہی ہے۔ خیبر پختونخوا کی حد تک پی ٹی آئی کی حکومت کے پاس مربوط لائحہ عمل اور منصوبہ بندی کا فقدان ہے۔ نظام حکومت اشتہار بازی کے ذریعے چلایا جا رہا ہے۔ ان حالات میں اگلے انتخابات میں خیبرپختونخوا سے پاکستان تحریک انصاف کی مقبولیت مزید کم ہونے کا امکان ہے۔ حلقہ پی کے 8 کے ضمنی انتخابات میں تحریک انصاف کے امیدوار تیسرے نمبر پر رہے جبکہ اس سے قبل اپر دیر کے عوام نے تحریک انصاف اور جماعت اسلامی کے مشترکہ امیدوار کو بدترین شکست سے دوچار کرتے ہوئے حکومت کو سبق سکھایا ہے مگر عوام کی نبض پر کب کسی حکمران کا ہاتھ رہا ہے۔

One Response

  1. Muhammad Fida Hussain

    Patwaari Spotted 😀 Hosh ky nakhun lo bhai, and feel the change. Agar PTI stone age mein push kar rahi hy, to phir ANP ka tenure kia tha?

    جواب دیں

Leave a Reply

%d bloggers like this: